پاکستان کے طویل القامت غلام شبیر الریاض میں پاکستانی کمیونٹی سے ملاقات

الریاض – پاکستان کے طویل القامت غلام شبیر آج کل سعودی عرب میں مقیم ہیں گزشتہ روز وہ ایک معروف مقامی ہوٹل میں پہنچے تو پاکستانی کیمونٹی ممبران کی جانب سے ان کا شاندار استقبال کیا گیا،غلام شبیر نے بتایا ان کا تعلق فیصل آباد سے ہےان کی پیدائش 1980 کی ہے اس لحاظ سے اب ان کی عمر 38 سال ہے، ان کا قد سات فٹ آٹھ انچ کا ہے جبکہ وہ دنیا کا سب سے بڑا جوتا پہنتے ہیں جس کی لمبائی اٹھارہ انچ ہے، جو کہ سپیشل آرڈر پر فیصل آباد کا ایک کاریگر بناتا ہے،سن دوہزار سے لیکر دوہزار چھ تک ان کا نام گنیز بک آف ورلڈ ریکارڈ میں درج رہا ہے جس پر ان کو بہت خوشی ہوتی ہے،غلام شبیر نے بتایا کہ وہ اللہ کا شکر ادا کرتے ہیں کہ انھیں اس قداور جسامت کے ساتھ تخلیق کیا گیا ہے،اسی کی بدولت میں دنیا کے 45 سے زائد ممالک کاسفر بھی کر چکا ہوں،عرب ممالک سے انہیں خاص محبت ہے کیونکہ یہاں کے لوگ انہیں بہت زیادہ پسند کرتے ہیں،اور اب وہ سعودی عرب کی معروف ڈرامہ سیریل تاش قتاش میں کام کر رہے ہیں جوکہ تیس اقساط پر مشتمل ڈرامہ ہے اور اس کی ہر قسط میں ان کو کردار نبھانے کا موقعہ دیا گیا ہے، غلام شبیر کا کہنا تھا کہ وہ دنیا گھوم چکے ہیں مگر پاکستان سے پیارا ملک کوئی دوسرا نہیں دیکھا،کئی ایک ممالک نے شہریت دینے کی پیشکش کی مگر مجھے پاکستانی ہونے پر ناز ہے اور اسی کے پاسپورٹ پر سفر کرتے ہوئے فخر محسوس کرتا ہوں،پاکستان اسلامی دنیا کے علاوہ باقی دنیا کے لئے بھی اہم ترین ملک ہے مگر اس کی جتنی قدر اوورسیرز پاکستانی کرتے ہیں ملک کے اندر رہنے والے پاکستان کی قدر سے نا آشنا ہیں شادی کے حوالے سے ان کا کہنا تھا کہ ابھی تک وہ غیر شادی شدہ ہیں کئی بار آفر ہوئی ہے مگر اب وہ جلد ہی شادی کے بندھن میں بندھ جاہیں گے،غلام شبیر نے بتایا کہ ان کے پسندیدہ لیڈر نوازشریف ہیں،کیونکہ وی عوام کے دکھ درد کو باخوبی جانتے ہیں اور پاکستان کو مسائل سے نکالنے کے لئے کام کرتے ہیں، پرموٹر قمر الدین انصاری نے کہا کہ اگر غلام شبیر کو اب بھی گنیز بک آف ورلڈ ریکارڈ کے لئے نامزد کیا جائے تو دنیا بھر میں پہلے نمبر پر ہونے کا اعزاز دوبارہ حاصل کر سکتے ہیں مگر اسپانسر نا ہونے کی وجہ سے فی الحال ایسا ممکن نہیں ہے،

Facebook Comments