سیدات الریاض لیڈیز گروپ کی جانب سے ایک پروقار تقریب کا انعقاد

ریاض ۔ سیدات الریاض لیڈیز گروپ سیدات الریاض لیڈیز کلب نامی گروپ کا شمار ریاض کے بڑے فورم میں ہوتا ہے۔جوکہ 25 اپریل 2011 کو ام ابراہیم قریشی نامی شخصیت نے بنایا۔جوکہ ایک آرکیٹیکٹ ہونے کے ساتھ ساتھ Event Planner بھی ہیں ۔ اور سترہ سالوں سے مقیم ہیں۔اس گروپ کے علاوہ انکا ایک اور میٹریمونیل گروپ بھی ہے۔جس سے بہت سے گھرانوں نے استفادہ کیا اور انکی بچیاں اپنے گھروں میں اچھی ازدواجی زندگی گزار رہی ہیں۔اور یہ سب کام ام ابراہیم قریشی ایک کے طور پر کرتی ہیں۔اس گروپ کی گئی ایک کو ایڈمن بھی ہیں۔گروپ ایڈمن جن میں سرفہرت منزہ اختر، فزا فاطمہ ، نصرت خان ، صائمہ عبید ، شازیہ وحید اور عنبرین عرف افی بین شامل ہیں۔ اور گروپ ایڈمن کے ساتھ اس گروپ کی مختلف زمہ داریوں کو احسن طریقے سے انجام دے رہی ہیں۔سیدات گروپ کا آغاز ایک چھوٹے F.B(فیس بک ) سے ہوا اور آج یہ 19 ہزار مختلف قومیت سے تعلق رکھنے والی خواتین پر شامل ہے۔اور اب یہ ریاض میں خواتین کا سب سے بڑا اور مقبول liveفورم بن چکا ہے ۔ بلکہ اسے ریاض لیڈیز کا googleکہا جائے تو بجا ہو گا۔جہاں خواتین نہ صرف اپنے مسائل کو حل کرنے کی کوشش کرتی ہیں۔بلکہ محنت اور ہمدردی کے جذبے سے سرشار فی سبیل اللہ ایک دوسرے کی مدد کرنےکی بھی کوشش کرتی ہیں۔گروپ ایڈمن ام ابراہیم قریشی ایک ہمہ گیر شخصیت کی مالک ہیں۔اور ان کے گروپ کا اہم مقصدپردیس میں پاکستان کمیونٹی کیلئے سماجی تقریبات کا انعقاد بھی ہے۔اس کے علاوہ تمام تفریحی مواد بغیر موسیقی آلات کے ترتیب دیا جاتا ہے ۔چنانچہ آج ریاض کی خواتین اس گروپ کے ذریعے ایک خاندان بن چکی ہیں جن خوشیاں ایک دوسرے سے وابستہ ہیں۔غرض یہ گروپ گھر بیٹھی خواتین کیلئے آکسیجن کا کام دیتا ہے۔اور وہ گھر بیٹھے بھی اس گروپ کے ذریعے نہ صرف تفریح حاصل کرتی ہیں ۔ بلکہ اپنے خوشی و غم بھی ایک دوسرے سے شیئر کرتی ہیں۔تاکہ لوگ پردیس کے گھٹن ذدہ ماحول میں دیس کی بہاروں کا مزہ لے سکیں۔اسی سلسلے کے تحت 12 تقریبات کا انعقاد ہو چکا ہےاور 23 فروری بروز جمعہ 2018 کو ایک اور ایسی ہی تقریحی تقریب کا انعقاد مطعم بصل اُحمر۔ میں کیا گیا۔اس رنگا رنگ تقریب کی مہمان خصوصی خود اس گروپ کی ایڈمن ام ابراہیم قریشی تھیں۔ جنہوں نے تقریب کو پر رونق بناتے ہوئے میزبانی کے فرائض بھی سر انجام دیئے۔تقریب کو مزید دلچسپ بنانے کیلئے مختلف مقابلوں اور تفریحی کھیل کا انتظام بھی کیا گیا۔جسمیں چھوٹے اور بڑوں دونوں نے پھرپور حصہ لیا۔ اسکے علاوہ اس تقریب میں ریاض کی بڑی شخصیات نے بھی شرکت کی جن میں خواتین ڈاکٹرز انجینیئزاور آرٹسٹ شامل تھیں۔ مختلف تحائف بھی دیئے گئے جس کیلئے ہماری معزز گروپ ممبرزمدیحہ اختر ، نور فاطمہ ، ماہا اعجاز علی ، فاطمہ علی صدیقی اور حور عالم نے تعاون کیا۔تقریب کے اختتام پر پرتکلف عشائیہ کا بھی اہتمام تھا۔اور خواتین اس تقریب میں خوب لطف اندوز ہوئیں ۔ جو اس گروپ کا اصل مقصد تھا۔اس گروپ کے تحت ہونے والی تقریبات کی مقبولیت کی سب سے بڑی وجہ اسلامی اقدار کی پاسداری بھی ہے۔جن میں مذہبی رجحان کی مالک خواتین بھی بے فکری سے شرکت کرتی ہیں۔ کیونکہ اس میں پردے کا پورا اہتمام کیا جاتا ہے۔ اور مرد حضرات کو کسی صورت تقریب میں آنے کی اجازت نہیں ہوتی۔

Facebook Comments